تنگدستی کا وظیفہ جو نبی اکرمۖ نے اپنی بیٹی فاطمہ کو بتایا

آج جو عمل جو دعا آپ کو میں بتا رہا ہوں ۔ یہ چودہ سو سال پہلے رسول اکرمۖ نے حضرت فاطمہ کو بتائی ۔یہ اس نبی ۖ نے بتائی جن کی شا ن میں اگر سارے جہاں کے جن و انسان مل کر لکھنا چاہیں تو زندگیاں ان کی ختم ہو جائیں لیکن وہ آپ ۖ کی زندگی کا ایک باپ بھی مکمل نہیں کر سکتے ۔اللہ پاک نے نبی اکرم ۖ کو جیسا بنایا نہ ان کے پہلے کسی کو بنایا اور نہ بعد میں کو ئی بنائیں گے سب سے اعلیٰ سب سے اجمل سب سے افضل سب سے اکمل سب سے ارفعہ سب سے انورسب سے عالم تمام کاملات مل کربھی

آپ ۖ کی شان ویڈیودیکھنےکے لیے نیچے ویڈیوپر کلک کریںبیان نہیں کر سکتی ۔کیونکہ اللہ پاک نے اپنی مقدس کتاب قرآن کریم میں ارشاد فرمایا اے محبوب ہم نے آ پ کے زکر کو بلند کردیا ہے ۔ جس حستی کا زکر اللہ پاک بلند کر دے جس حستی پر اللہ پاک خود درود پاک پڑھیں جس نبی ۖ کا زکر اللہ ساری بیان کر دے جس حستی کا چلنا پھرنا اٹھنا بیٹھنا سونا جاگناکروٹ بدلنا کھانا پینا مومنین کے لیے باعث نجات ہے باعث شفا ء ہے ۔باعث رحم ہے باعث ثواب ہے باعث حکمت ہے اللہ پاک کی زات نے آپ ۖ کی زات کو مومن کے لیے باعث شفاء بنا دیا اس حستی نے آپ ۖ نے حضرت فاطمہ کو وہ عمل سکھا دیا وہ دعا سکھا دی کے دیکھومیری بیٹی ساری عمر انسان کی ایک جیسی نہیں ہے رہتی

حالات بدلتے رہتے ہیںانسان جو اس دنیا میں آیا ہے ساری عمر اس کے حالات ایک جیسے نہیں ہے رہتے ۔کبھی اللہ پاک بہت زیادہ دے کر ازماتے ہیں کبھی اللہ پاک لے کر ازماتے ہیں ۔کبھی اللہ پاک دولت بھی زیاد ہ دیتے ہیں کبھی ہاتھ تنگ کر دیتے ہیں بندے کا ایسی طرح انسان امیر ہے یا غریب ہے ایک جیسا وقت نہیں ہے رہتا اس پر جب انسان تنگدستی کا شکا ہو جائے ۔ تو ایسے میں نبی اکرم ۖنے اپنی بیٹی کو وہ دعا سکھائی کے اگر انسان وہ دعا پڑھ لے تو اللہ پاک تنگدستی کو فکرو فاقہ کوتنگ ماشی کو اللہ پاک اس سے ہٹا دیتے ہیں ۔

ایک مرتبہ حضرت فاطمہ حضور ۖ کے پاس آتی ہے اور کہتی ہیں ابا جان ایک ماہ سے زائد کا عرصہ ہو چکا ہے ۔میرے گھر میں چلا چلانے کی نوبت تک نہیں ہے ۔آپ ۖ نے فرمایا بیٹی اگر تم کہتی ہو تو میں تمہارے گھر پانچ بکریا بجوادوں اور میں تم کو ایک ایسی دعا سکھا دوںجوحضرت جبرائیل نے یہ دعا سکھائی کے اگر یہ دعا پڑھوتو اللہ پاک تنگدستی کو دور کر دے گاوہ دعا یہ ہے ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *